نشہ بھی کوئی زندگی ہے!

4

منشیات کو ٹینشن ختم کرنے کے لیے استعمال کیا جا تا ہے۔ اونچی سوسائٹی میں لوگ ریلیکس ہونے کے لیے شراب لیتے ہیں ’’ وڈے لوگ وڈیاں گلاں‘‘۔ دن بھر کچھ بھی گڑبڑ ہو ان کو پکا یقین ہوتا ہے کہ شام کو شراب سب ٹھیک کر دے گی۔ اس کے بعد چل سو چل دھیرے دھیرے یہ زندگی کا حصہ بن جاتی ہے۔ ظاہر ہے جب مسائل کو شراب کے نشے میں غرق کیا جاتا ہے، تو حل نہیں ہوتے، پس پردہ چلے جاتے ہیں۔ مسائل حل کرنے کے لئے مہارت کی بجائے دو جام ٹکا لینے سے دماغ فکر کرنا چھوڑ دیتا ہے، پھر شراب ٹکا کر جھوٹ بولتی ہے۔ سب اچھا کی رپورٹ دیتی ہے۔ پینے والے کو لگتا ہے کہ کوئی غم نہیں۔ شراب پینے کے بعد زیادہ تردد نہیں کرنا پڑتا اور جھٹ پٹ سب کچھ صحیح نظر آنے لگتا ہے۔ بے چینی اور غصے پر قابو پانے کے لیے مہارت حاصل کرنا چاہیں تو کچھ وقت چاہیے جو ہمارے پاس ہوتا نہیں اور شراب جماتی ہے ہتھیلی پر سرسوں۔

شراب ایک عارضی حل ہے جو بلانوشوں کے لیے وبال جان بن جاتا ہے۔ شراب کی بیماری میں یہ عارضی حل مٹھی میں سے ریت کی طرح نکلتا ہوا محسوس ہوتا ہے۔ پھر وہ بوتل سے چپکے رہتے ہیں۔ کہتے ہیں،’’ گو ہاتھ میں جنبش نہیں، آنکھوں میں تو دم ہے، رہنے دو ساغر و مینا میر ے آگے‘‘۔ جن مسائل کو حل نہیں کیا جاتا وہ بڑھتے رہتے ہیں۔ نشہ اترتے ہی بے چینی اور بھی بڑھ کر وار کرتی ہے۔ نشے میں دھت ہونے کے باعث جھگڑوں اور خراب رویوں کی وجہ سے نئے مسائل بھی پیدا ہوتے رہتے ہیں۔ شراب کا ڈپریشن سے بھی گہرا تعلق ہے۔ بلانوشوں میں ذہنی دباؤ برداشت کرنے کی صلاحیت کم ہو جاتی ہے۔ وہ مشکل کاموں کو اور بھی مشکل سمجھنے لگتے ہیں۔ شراب بے خوابی کی کیفیت بھی پیدا کرتی ہے جس سے اضطراب اور بھی بڑھ جا تا ہے۔ مسئلوں کا حل بذات خود مسئلہ بن جاتا ہے۔ میر کیا خوب سادہ ہیں، بیمار ہوئے جس کے سبب، اسی عطار کے لونڈے سے دوا لیتے ہیں۔

منشیات، شراب اور دیگر علتیں گھروں کا امن و سکون تباہ کر دیتی ہیں۔ علتوں میں مبتلا انسان اصلاح کی طرف پہلا قدم خود نہیں بڑھاتے، یہ بیڑہ ان سے پیار کرنے والے اٹھاتے ہیں۔ علاج کا فیصلہ مریض کے ارد گرد صحت مند دماغوں سے ابھرتا ہے۔

منشیات کا استعمال بیمار اور لاچار کر دیتا ہے۔ یہ بیماری تباہ کن ہے۔ تاہم تسلی رکھیں یہ قابل علاج ہے۔ منشیات، شراب اور دیگر علتوں سے نجات کے کئی راستے ہیں۔

سب کو داخلے کی ضرورت نہیں ہوتی ایڈکشن کی ابتداء ہو تو مریض کا علاج میں آنا ضروری نہیں، اہل خانہ ٹریننگ کے ذریعے اپنے پیارے کو علت سے نجات دلا سکتے ہیں ایڈکشن قدم جما چکی ہو تو مریض کو آؤٹ ڈور میں آنا پڑتا ہے۔ بیماری بہت پرانی ہو تو داخلہ ضروری ہو تا ہے، مریض میں علاج کی خواہش اور جذبہ کیسے پیدا کریں، آپ کو یہ سمجھانا ہماری ذمہ داری ہے۔ صداقت کلینک ایڈکشن کی بے مثال علاج گاہ ہے، جہاں کلائنٹس کی تخلیقی صلاحیتوں کو اجاگر کیا جا تا ہے اور وہ اپنی زندگی کی تعمیر نو کر لیتے ہیں۔

وہ فیصلہ آپ کیجیے جو مریض نہیں کر سکتا، اسے گھر سے لانے اور نشے سے نجات دلانے کی ذمہ داری ہم قبول کرتے ہیں۔ صداقت کلینک ایڈکشن کی بے مثال علاج گاہ ہے۔ آخر نشہ آپ کے پیارے کا مقدر کیوں رہے؟ ابھی رابطہ کیجیے۔

اپنی رائے یہاں لکھیئے:-

comments