تعارف:

یہ آرٹیکل ڈاکٹر صداقت کی جس ویڈیو سے ماخوذ ہے اس کا عنوان درج ذیل ہے:

“خاندانی کاروبار اورتنازعات”

پچھلی دو صدیوں سے ، خاندانی کاروبار پوری دنیا میں فروغ پا رہے ہیں۔ ٹکنالوجی میں ترقی اور مواصلات میں آسانی دو اہم عوامل ہیں جن سے خاندانی کاروبار کو وسعت دینے اور ترقی میں مدد ملی ہے۔ اگر ہم تاریخ کی کتابوں پر گہری نگاہ ڈالیں تو ہم دیکھ سکتے ہیں کہ بادشاہ کئی سالوں سے لوگوں پر حکومت کرتے تھے۔ ایک بار جب ان کی میعاد پوری ہو جاتی تھی ، تو وہ ان کی میراث کو اپنے ورثاء میں منتقل کردیتے تھے۔ نو منتخب بادشاہ کو اس کے شاہی آسائشوں سے فائدہ اٹھانا تھا جو اس کے باپ دادا نے حاصل کیا تھا۔ مزید برآں ، یہ ان کا فرض تھا کہ وہ تمام شاہی اصولوں اور روایات کی پیروی کریں اور پھر اسے آگے بڑھائیں۔ خاندانی کاروبار اس سے مختلف نہیں ہے۔ ایک کامیاب خاندانی کاروبار سے خاندان کے دوسرے افراد اور آنے والی نسلوں کو بزرگوں کی تخلیق کردہ آسائشوں سے لطف اندوز ہونے کی اجازت ملتی ہے۔ خاندانی کاروبار کے ایک کامیاب کاروبار کی تعمیر درحقیقت ایک سخت اور بہت محنت طلب کام ہے ، لیکن اس کو طویل عرصے تک برقرار رکھنا زیادہ مشکل ہے کیونکہ ہر گزرتے دن کے ساتھ جیسے جیسے آسائشیں بڑھ رہی ہیں ویسے ہی مقابلے کا رجحان بڑھ رہا ہے۔

عام طور پر ایک کاروبار کو پھلنے پھولنے میں بیس سے پچیس سال لگتے ہیں ، جو بہت زیادہ وقت ہے۔ تاہم ، وقت کے ساتھ ساتھ کسی کاروبار کو منظم کرنے کی صلاحیت کم ہوتی جاتی ہے۔ اسی وجہ سے ، والدین چاہتے ہیں کہ ان کے بعد ان کے بچے کاروبار کو اسی طرح چلائیں جیسے وہ اسے اپنے وقت میں چلاتے آئیں ہیں ۔ تاہم ، یہی وہ مقام ہے جہاں زیادہ تر پریشانی ہوتی ہے۔ والدین نے اپنے بچوں سے بہت زیادہ توقعات رکھتے ہیں کیونکہ انہوں نے بنیادیں قائم کرنے کے لئے انتہائی محنت کی ہے۔ وہ توقع کرتے ہیں کہ ان کے بچے بھی ان کی بنائی  ہر چیز کا ویسے احساس کریں جیسے وہ کرتے ہیں. تو اسی مقصد کے حصول کے لیے وہ اپنے بچوں کے ساتھ ایک خاص طریقے سے برتاؤ کرتے ہیں ۔ وہ چاہتے ہیں کہ ان کے بنائے کاروبار کو ہمیشہ اس کی بنیادی اقدار کے حوالے سے چلایا جائے اسی لیے والدین یہ چاہتے ہیں کہ وہ اپنی اقدار کو اپنی آنے والی نسلوں کو منتقل کر سکیں۔ تاہم ، ہر گزرنے والی نسل کے ساتھ ، والدین کے لئے اپنی بنیادی اقدار کو اگلی نسل میں منتقل کرنا مشکل تر ہوتا جارہا ہے۔ بدقسمتی سے ، بہت سے بیرونی عوامل جیسے تعلیمی ماحول ، معاشرتی سوجھ بوجھ ، اور سوشل میڈیا نے نوجوان نسل کو اس حد تک منفی طور پر متاثر کیا ہے کہ وہ رہنمائی کے لئے اپنے والدین اور بزرگوں کی طرف زیادہ نگاہ نہیں رکھتے ہیں۔وہ چاہتے ہیں کہ تمام چیزیں ان کی سوچ کےمطابق چلیں اور والدین انہیں اپنے طریقے سے اپنی اقدار پر چلانا چاہتے ہیں یہی وہ وجہ ہوتی ہے جب والدین اور بچوں میں تنازعات شروع ہوتے ہیں.

والدین اور بچوں میں تنازعات صرف کاروبار کو لے کے نہیں بلکہ اس کے علاوہ اور بھی بہت سے عوامل پر اختلاف ہو سکتا ہے، جیسے کے تمام پانچ انگلیاں برابر نہیں اسی طرح ایک ہی گھر میں رہنے والوں کی سوچ بھی ایک جیسی نہیں ہو سکتی.

کئی ایسے خاندان جو خاندانی کاروبار سے منسلک ہیں ان میں بچوں کی پرورش اس سوچ کو پروان چڑھاتے کی جاتی ہے کہ جو بھی کمایا جا رہا ہے وہ صرف اسی کے لیے کمایا جا رہا ہے تو جب بچہ اس سوچ کے ساتھ بڑا ہوتا ہے تو اس کے ذہن میں یہ بات آچکی ہوتی ہے کہ وہ حکمرانی کے لئے ہے. ایسی صورت میں وہ یہ سمجھنے سے قاصر ہوتا ہے ہے جو بنایا گیا وہ بہت محنت سے بنایا گیا ہے اور اسے اس پوزیشن پر آنے کے لیے خود کو اہل ثابت کرنا ہوگا.یہ نہ سمجھنے کی صورت میں اس کے کیے گئے اقدامات کو غلطی سمجھا جاتا ہے اور سخت رویہ اختیار کیا جاتا ہے.

دوسرا پہلو جس میں تنازعات پیدا ہو سکتے ہیں وہ ہے مستقبل کے بارے میں سوچنے کی آزادی نہ ہونا. کئی بچے جو کاروبار میں دلچسپی نہیں رکھتے ان کو کاروبار کی طرف دھکیلا جاتا ہے جس سے اختلافات پیدا ہوتے ہیں.

خاندانی کاروبار کو سنبھالنے کے دوران متعدد تنازعات پیدا ہوسکتے ہیں جیسے بچوں میں دشمنی ، والدین اور بچوں کے مابین سوچ کا تصادم ، بچے اپنے خاندانی کاروبار کو بنیادی کاروباری اقدار کی قدر و نظر سے نظرانداز کرتے ہیں ، یا والدین بچوں کو اپنے کاروبار میں شامل ہونے پر مجبور کرتے ہیں اگر چہ بچے کچھ اور کرنا چاہتے ہیں ۔ کچھ والدین اپنے بچوں کو اپنی تخلیقی صلاحیتیں استعمال کرنے نہیں دیتے ہیں اور پرانے انداز میں کاروبار کو سنبھالنے کے لئے ان پر دباؤ نہیں ڈالتے ہیں۔ بدقسمتی سے ، یہ سب مسائل محض مواصلات کے ذریعے آسانی سے حل ہوسکتے ہیں۔ اختلافات پر بات چیت ہر ایک کو ایک دوسرے کے نقطہ نظر کو سمجھنے کی اجازت دیتی ہے۔ والدین کو اپنے بچوں کی بات سننی چاہئے ، اور بچوں کو بھی ایسا ہی کرنا چاہئے۔ انا ، تکبر اور بے عزتی کی کوئی جگہ نہیں ہونی چاہئے۔ کاروبار اہم ہے ، لیکن ایک کنبہ سے زیادہ نہیں۔ پہلے اپنے کنبہ کے ساتھ تعلقات کو بہتر بنانا اور پھر کاروباری امور کے بارے میں بات کرنا دانشمندی ہے۔ کسی کاروبار میں آپ کو کنبے کی قیمت نہیں لگانی چاہئے۔

تحریر: مدیحہ اعظم کلینکل سائیکالوجسٹ

خیالات: ڈاکٹر صداقت علی